ماروی سرمد:کلوزنگ جہاد فیکٹریز

Al-Badar Mujahideen funeral

پچھلا جمعہ مالا کنڈ کا پچھلے کئی مہینوں کا خونی ترین دن ثابت ہوا .میڈیا رپورٹس کے مطابق اس دن دیر نے اکیس تابوت اٹھائے .
لوئر اور اپر دیر میں یہ تابوت افغانستان کے صوبے خوست سے آئے .جہاں پر امریکی ڈرون حملے کے نتیجے میں ،ایک دہشتگردوں کے ٹریننگ کیمپ میں خود کش بمباری کی ٹریننگ حاصل کرتے ہوے یہ پاکستانی ہلاک ہوئے .خوست کے گورنر کے مطابق ہلاک شدہ پاکستانیوں کی تعداد پچاس سے زیادہ ہے .
مقامی افراد کے مطابق یہ تابوت ،البدر تنظیم کے پرچم میں لپٹے ہوئے تھے .کچھ لاشیں تو صرف جسم کے چند حصوں پر مشتمل تھیں .اس خبر کے بعد یہ نیوز مکمل اندھیرے میں چلی گئی .پرنٹ میڈیا پر بھی صرف انگلش اخبارات میں اس کی خبر چھپی .ہمارے الیکٹرانک میڈیا نے “سیلف سنسر شپ ” کا مظاہرہ کرتے ہوئے اس پر کوئی خبر نہیں دی ،سیلف سنسر شپ اس لئے کہ کسی ریاستی ادارے نے سنسر شپ کے احکامات جاری نہیں کئے ہوئے ہیں . عام طور پر چیختے چنگھاڑتے اینکرز نے اس موضوع پر اپنے لب سی لئے .

اگر آپ البدر کی تاریخ پڑھیں تو اس خاموشی کی وجہ سمجھ میں آتی ہے .اس نام کا گروپ انیس سو اکہتر میں پاکستان کی اسٹیبلشمنٹ کی “پرا کسی” کے طور پر بنگالیوں کی “مکتی باہنی” جو کہ انڈیا کی پراکسی تھی کے خلاف استمعال ہوا تھا .مشرقی پاکستان اس وقت ان ڈان تنظیموں کی لڑائی کا اکھاڑا بن گیا جب بنگالی عوام کے پاکستان سے لاتعلقی کے جذبات نے اسکو فروغ دیا .مکتی باہنی اور البدر بمع اسکی ذیلی تنظیم الشمس نے اس دور میں سنگین جنگی جرائم کا ارتکاب کیا .
حمود الرحمان کمیشن رپورٹ کے چیپٹر نمبر دو کے نکتہ نمبر میں اٹھائیس میں لکھا ہے کہ
“ہمیں پاکستان آرمی کی جانب سے بنگالی دانشوروں اور پروفیشنلز کے قتل عام کا کوئی ثبوت نہیں ملا .اگر بنگلہ دیش حکومت کے پاس اسکا کوئی ثبوت ہے تو مہیا کرے “مگر اسی صفحے کے آخر میں اس بھوت کا ذکر ہے جس نے بنگلادیشی دانشوروں اور پروفیشنلز کا قتل کیا جس کا الزام پاکستان آرمی پر لگایا جاتا رہا جو اس وقت کے مشرقی پاکستان میں تعنیات تھی .کچھ یوں لکھا تھا کہ
” اب یہ بات معلوم ہو چکی ہے کہ اتوار بارہ دسمبر انیس سو اکہتر کو انڈین آرمی ڈھاکہ کے قریب پہنچ چکی تھی ،اس وقت پاکستان کے آرمی افسران اور انکے حامی سولین حمایتیوں کی صدارتی آفس میں ملاقات ہوتی ہے .یہ دونوں مل کر دو سو پچاس ایسے دانشوروں اور پروفیشنلز کے ناموں کی لسٹ بناتے ہیں جو کہ ڈھاکہ کی “کریم” ہے اور انہیں گرفتار یا ہلاک کرنے کا منصوبہ بناتے ہیں .یہ گرفتاریاں پیر اور منگل کو سرکاری سر پرستی میں چلنے والی البدر تنظیم کے زیر عمل ہو جاتی ہیں .سرکاری ہتھیار ڈالنے کے اعلان سے صرف ایک دن قبل ،البدر ان لوگوں کو گروپس میں تقسیم کر کے انکا قتل عام کر دیتی ہے “
گو کہ ان اکیس لاشوں کی خبر تو ہمارے میڈیا کی سکرینوں پر نہ چمک سکی .مگر جماعت اسلامی کے دو رہنماؤں کی ہلاکت کی خبر ،اس پر گرما گرم مباحثہ اور ان لیڈرز کے حق میں بیانات ،اور ہیڈلاینز خوب زور شور سے جگمگاتی رہی کیونکہ میڈیا میں اینکرز کی اکثریت پرو جماعت اسلامی ہے یا اکثر محب وطن بنانے کے شوق میں یہ سب کر رہے تھے . دلیل یہ تھی یہ لیڈرز جو پھانسی چڑھے پرو پاکستانی تھے .یہ بات تو ماننی چاہئے کہ ہر انسان کو “فیئر ٹرائل ” کا حق ملنا چاہئے ،چاہے اسکا تعلق بنگلہ دیش سے ہو ،بلوچستان سے ،سعودی عرب سے ہو یا ایران سے ہو .
البدر کی جانب واپس چلتے ہیں .1971 کے جنگی جرائم کے الزامات کے بعد یہ گروپ منظر نامے سے غائب ہو جاتا ہے .لیکن اچانک 1985 میں ایک بار پھر جماعت اسلامی کے بینر تلے افغان جہاد میں یہ تنظیم ایکٹو ہو جاتی ہے .افغان جہاد کے ہی دنوں میں البدر گلبدین حکمت یار کی حزب اسلامی میں ضم ہو جاتی ہے .بعد میں مقبوضہ کشمیر میں جہاد کے دوران یہ حزب المجاہدین کے نام سے کام کرتی ہے .اس وقت البدر کے ممبران “مجاہدین” اور اب “دہشتگردوں ” کے نام سے سے پکارے جاتے ہیں .انیس سو نواسی میں امریکا اس گروپ کو دہشت گرد تنظیم قرار دیتا ہے .
لیکن ٹریننگ کیمپس طالبان کے دور میں افغان زمین پر جاری رہتے ہیں .اس دوران پاکستان میں صوبہ سرحد اور اب پختون خوا میں بھی ٹریننگ کیمپس مانسہرہ کے علاقوں میں قائم رہتے ہیں .انیس سو اٹھانوے میں جا کر کہیں بخت زمین اس تنظیم کو دوبارہ مقبوضہ کشمیر کی آزادی کا نعرہ لگا کر کھڑا کر دیتے ہیں .عجیب بات یہ ہے کہ البدر کے اکثر کارکن خود کشمیری نہیں تھے اور نہ ہی بخت زمین کشمیری تھے ہاں اسکے بانی لیڈران میں سے شمار کئے جانے والے عارفین جو جانثار اور لقمان کے نام سے بھی جانے جاتے ہیں وہ نسلا کشمیری تھے .انکا تعلق آزاد جموں کشمیر سے تھا .
2002 میں یہ گروپ اب امریکن اور نیٹو افواج کے خلاف افغانستان کو آزاد کرانے کا مشن پر جت جاتا ہے .اسکے ساتھ ساتھ یہ اسرائیل اور تمام اتحادی ممالک کے خلاف بھی جہاد کا اعلان کر دیتا ہے .یہ بات بھی یاد رہے کہ افغان طالبان کی طرح البدر نے کبھی پاکستان آرمی کے خلاف کسی لڑائی میں حصہ نہیں لیا .بلکہ البدر کے حلقے تو کارگل کی جنگ میں پاکستان آرمی کے ساتھ لڑنے اور انڈین آرمی کو نقصان پہنچانے کے دعوے کرتے رہے .
ایک بات یا لنک جو اس سارے عرصے میں یکساں رہا ہے وہ جماعت اسلامی اور جماعت الدعوہ ہے .بلکہ کئی بار تو البدر تنظیم ، القاعدہ ،تحریک طالبان پاکستان ،اور لشکر طیبہ کے پاکستان میں “تسلیم شدہ” سیاسی اور سوشل گروپس جماعت اسلامی ،اور جماعت الدعوہ میں رابطے کا واسطہ رہے .تحریک طالبان کا چیف ملا فضل الله جماعت اسلامی کا رکن رہا تھا .بعد میں اس نے اپنی تنظیم تحریک نفاذ شہریت شریعت محمدی بنا لی تھی .
القاعدہ کے کئی سرگرم رکن جماعت اسلامی کے لیڈران کے گھروں سے برآمد ہوئے .2004 میں القاعدہ کا نمبر تھری خالد شیخ محمد جماعت اسلامی کی ایک خاتون ونگ لیڈر کے روالپنڈی کے ایک گھر سے گرفتار ہوا .اسی طرح ابو زبیدہ بھی بھی اسی سال پکڑا گیا جیسا لشکر طیبہ اور جماعت الدعوہ نے پناہ مہیا کر رکھی تھی .
ابھی حال ہی میں ستمبر 2013 میں القاعدہ کا ایک رکن جو فدائین کی ٹریننگ کے بعد لاہور آیا تھا ،پنجاب یونیورسٹی کے ہوسٹل نمبر ایک کے کمرہ نمبر 237 سے اسلامی جمعیت طلبہ کے اس وقت کے ناظم لاہور ،احمد سجاد کے نام سے الاٹ تھا ، جو کہ جماعت اسلامی کی طلبہ تنظیم ہے ،اس سے پکڑا گیا .
جماعت اسلامی کے سابق امیر اکثر پاک فوج کے خلاف اور تحریک طالبان کے حق میں بیانات دیتے رہے .بلکہ انہوں نے تو خود کش حملوں کے خلاف بیان دینے سے بھی انکار کر دیا تھا .
طویل کہانی کو مختصر کریں تو جماعت اسلامی کے لیڈرز جن کے گھروں سے پاکستانی عوام اور فوجیوں کو قتل کرنے والے دہشت گرد پکڑے گئے ،جماعت الدعوہ اور لشکر طیبہ جن کے القاعدہ اور تحریک طالبان سے تعلقات ہیں ،انکے سپورٹر جیسے ملا عبدلعزیز وغیرہ یہ سب کھلے عام دند ناتے پھر رہے ہیں .یہ کبھی ملک کے خلاف بیانات دیتے ہیں تو کبھی رٹ توڑتے ہیں مگر انکے خلاف کوئی کاروائی کی آواز بھی بلند نہیں کر سکتا .
لوئر اور اپر دیر میں اکیس نوجوانوں کے قاتل یہ جبری تنظیمیں ہمارے نوجوانوں کو جہاد کے نام پر مروا رہی ہیں .انکے خلاف کسی قسم کی کاروائی فی الوقت ایک دیوانے کا خواب ہے

Originally published by The Nation on 24 November 2015

Traitors: Theirs and Ours

Rising intolerance in India is no secret. Lynchings of Muslims by Hindu extremists have made international headlines, and the world has taken notice of Modi’s unwillingness to show sensitivity to his country’s minorities. So when Amir Khan said that he too felt alarmed by the growing incidents and even his wife had asked if they should move, it should have come as no surprise. However, the reaction – both here and in India – tells a lot.

In India, Amir Khan has been termed a traitor by right-wing hyper-nationalists, with even Shah Rukh Khan thrown in for good measure. In Pakistan, however, Amir Khan is being treated at a martyr who is being persecuted for doing nothing but telling the truth. This is the correct response, and it should also come as no surprise except when we remember how we treat our own Amir Khans.

The list is a long one: Asma Jahangir, Pervez Hoodbhoy, Marvi Sirmed, Hamid Mir, Husain Haqqani, Raza Rumi, Mama Qadeer…the list goes on and one. Anyone who dares to stand up for Ahmadis, question Army’s actions in Balochistan or support for jihadi groups like Jamaat-ud-Dawa, or apologises for treatment of Bengalis before 1971 is branded as a traitor and threatened with their lives. Are we hypocrites? Or can we not see that we are acting exactly like the Hindu extremists we claim to be against?

 

Losing Our Voice

A recent column by Ardeshir Cowasjee for Dawn was one of those pieces that connects the dots and makes a picture of the world start to take shape. His column, Killing the Messengers, addresses a major obstacle in moving Pakistan beyond the mess that we’re in. It’s not that we’re having the wrong conversation, it’s that we can’t have any conversation at all.

Our inability to have a civil debate has become increasingly apparent. But this is not a ‘pox on both houses’ situation, as much as we like to cast blame equally. When Marvi Sirmed appeared on Shahid Nama with Zaid Hamid, she didn’t accuse anyone being a traitor or unpatriotic. She just offered an alternative point of view. More recently, it’s been Mubashir Luqman lobbing such accusations against Najam Sethi of being an American agent. Nevermind the fact that in listing the top ten mistakes of Pakistan, the same Najam Sethi lists as number one the alliance with America. But he also criticises the decision not to recognise Sheikh Mujib’s electoral majority in 1970 elections, and the Kargil assault, which some want to pretend happened differently than they did.

This is not a new phenomenon. Back in 2008, Javed Chaudhry wrote a scathing attack against Najam Sethi. But Javed Chaudhry didn’t debate his positions then either, rather he attacks him personally, saying Najam Sethi is mafia lord of a Lahore NGO sponsored by America to spread anti-Pakistan views.

If you take the time to actually listen, what these so-called “liberal extremists” say isn’t really extreme at all. Is it really “extreme” to suggest that secret conspiracies are not responsible for all of our problems? Or that maybe, just maybe, military officers have not always made the wisest decisions? People like Marvi Sirmed and Najam Sethi aren’t advocating an athiest Marxist-Leninist revolution. They’re not anarcho-syndicalists who want to replace the National Assembly with a federation of worker’s councils. Could it be that the right wing finds them far more threatening because when they speak, they actually make sense?

If someone says something the right wing doesn’t like, they don’t offer a reasoned counter-argument – they resort to character assassination. They term you a traitor and say you are spreading anti-Pakistan views. They say you’re a paid agent. And this is used not only against journalists, but politicians, government officials, and even private citizens who dare to have their own opinions. Zaid Hamid calls for politicians to be “hanged by the trees” and Ahmed Quraishi calls for a “ruthless military coup”. They resort to threats of violence because they cannot convince people with their ideas alone.

It’s easy to dismiss such threats as online taunting, but this right wing mindset has a bad habit of crossing the line between uncivil talk and uncivil behaviour. What starts as character assassination too often escalates to just plain ‘assassination’. Whoever killed Saleem Shahzad, there is little doubt that his killers were motivated by what he wrote. The killers didn’t offer any counter argument to Saleem Shahzad’s claims; they just didn’t like what he had to say, so they shut him up. Permanently.

Mumtaz Qadri murdered Salmaan Taseer not over any blasphemy that the governor committed, but because he disagreed with him about whether a law should be reformed. Once again, nevermind the fact that by advocating for rahma (mercy) Salmaan Taseer was not challenging Islam, he was living it. What he was challenging was a political ideology that can’t bear to be challenged. So, without a trace of shame, Meher Bokhari says he’s ‘Western’ and reads a fatwa against him on TV. When the character assassination doesn’t deter Salmaan Taseer, Mumtaz Qadri shoots him in the back.

In a way, it’s rather ironic. The self-appointed defenders of Islam have replaced the central message of Prophet Muhammad (PBUH) with central message of Gen Zia-ul-Haq. They’re replaced itjihad with jihad, reason with guns. Similarly, these same self-appointed guardians of the national honour (ghairat) are turning Pakistan into a pariah state, increasingly isolated from the rest of the world.

So who’s really being anti-Pakistan here? Is it the so-called ‘liberal extremist’ commentators who are merely telling what happened in the past so that we may be saved from repeating it? No, the real extremists here are Pakistan’s wanna-be coup makers who want to kill (literally) any criticism that threatens to expose their delusions and the self-defeating adventurism it justifies.

This brings me back to Cowasjee, who wrote:

In our universe, Pakistan is in the middle of a party celebrating its greatness and no one wants a messenger of bad news to interrupt the self-glorification. But in the real world, we can kill as many messengers as we like, the message that Pakistan is in big trouble is unlikely to go away.

You don’t have to agree with everything Marvi Sirmed or Najam Sethi or anyone else says. I don’t. But I respect their right to say things that I don’t agree with. It’s not anti-Pakistan to want the country to be the best that it can be, and it’s not extreme to recognise your past mistakes so that you can improve for the future. It’s your real friends who will tell you when you have food in your beard. It’s your enemies who let you walk around looking like a fool.