CENSORED: Who Will Pay?

The following op-ed was originally published by The Nation on 26th Dec. It was quickly deleted from the newspaper’s website due to unknown orders from unknown offices. We are re-posting the piece in accordance with Articles 19 and 19(A) of the Constitution which guarantee “the right to freedom of speech and expression, and…freedom of the press” as well as “the right to have access to information in all matters of public importance”.

Pakistan Media

So Pakistan’s public will be made to bear the cost of about three million pounds damages and costs for the case filed by Mir Shakil-ur-Rehman (MSR) of the Jang/ Geo group against ARY channel for Mubashir Luqman’s twenty four libelous shows.
This will be the result of the UK High Court’s verdict against ARY for twenty four unbridled and defamatory programmes by Mubashir Lucman against MSR whilst at ARY.

But the UK court didn’t ask the citizens to pay, you might remark.
And you would be right to remark thus.
The court has stipulated ARY to pay out for damaging MSR’s reputation and endangering his life, as a lesson to ARY (and others) to not indulge in such activities.
But imagine: will the owner of ARY channel Salman Iqbal take this lying down, when he has no dog in the game except support from ‘the agencies’? A one-time loss he might even be willing to bear.
But given the slew of cases now being filed in the United Kingdom against ARY (including by the strongest Pakistani industrialist, Mian Mansha, and human rights activist Malala’s father) he would be inclined to bill the agencies for this bill, to set a precedent and basis for them footing the bills for all he has been doing at their behest.

Which brings us back to ‘Pakistan’s premier intelligence agency’.
Salman Iqbal will likely forward the bill to them.
And ‘they’ should rightly pay.
But what does that mean for us, the citizens? What it means is that in addition to its already invisible and unaccountable budget, millions of further pounds will have to be allocated, such that it can pay the bills for the new trend in foreign suits.

Is this, then, not the time for the people and the parliament to renew calls to bring the ‘the primary intelligence agency’ under democratic and financial oversight? This latest ARY casualty would just serve as the peg, the actual thousand leagues under the sea that is ‘the intelligence agency’ being the real target.

But here I must make a very important correction: in recent years the PR arm of the military has been a veritable arm of the military’s intelligence agencies, with the head of said PR agency, while leading the onslaught of military chief’s PR campaign, leading social media attacks on human rights and democracy activists, and leading social media attacks on ‘anti-nationalists’ and ‘ghaddars’ with his bevvy of the ‘Baloch girl’ army, has been reigning supreme.

So will this PR agency be made to pay part of the ARY bills (present and future)? Clearly, whilst ARY is now somewhat chained because of its broadcasts in the UK, BOL will carry on unfettered (to my knowledge it does not broadcast in other jurisdictions, and will cancel any plans to do so because of the ARY fiasco).

But what all this means is that we, the Pakistani citizens, will end up paying more for attacks against us, in the shape of (nontransparent) higher budgets for the country’s premier PR and intelligence agencies.

Moving on to Qazi Faez Isa and Najam Sethi’s take on the report: I was one of the first persons to identify the gaping hole in the honourable justice’s report.
That of not holding the Frontier Corp (FC) to account in any manner for the Quetta horror, obliterating in one fell an entire generation of lawyers and activists.
But Sethi saheb’s editorial of last Friday, whilst correctly criticizing Justice Isa’s report for not holding security agencies to account, ‘doth protest too much’ against the criticism of Chaudhry Nisar, the Interior Minister.
Not a word spoken against him in the Quetta Commission Report is untrue.
Did he not ignore all requests to proscribe Jamat-ul-Ahrar and Jamat-ud-Dawa Al Almi for months despite their claims (and no evidence to the contrary) of having perpetrated the Quetta lawyers massacre? Was he not caught hiding behind NACTA, which was hiding behind the ISI, which said, ‘they should have done their job per the law (despite the unwritten norms with regard to us’?

Whilst I’m the first one to agree with Sethi sahib regarding the egregious oversight with regard to security agencies far as the Quetta Inquiry Commission report is concerned, I am not with him in trying to exonerate the Minister of Interior.
I understand that what Sethi saheb is saying is that this is unfair.
But then rather than exonerate the boys’ man Chaudhry Nisar, why not question ‘them’? Why not try and expose ‘them’ rather than shield elements in the government? Let Chaudhry Nisar be the first casualty.
Only after might we be able to reach his enablers? My most humble submission to Sethi saheb: let’s catch what we can; only it can lead to the elements we have never been able to ‘catch’.
Let’s not exonerate obvious culprits.
Let’s try and get through to culprits via culprits.

The writer is a human rights worker and freelance columnist. Follow her on Twitter at @gulbukhari

International Human Rights Day: Pakistanis question state institutions about their missing human rights

Men, women and children belonging to the most marginalized segments of the society including gypsy community, brick kiln workers, sanitary workers, trans-genders, Persons with Disabilities, and religious minorities has questioned the government and the responsible state institutions and departments about their human rights in a Rally held in front of Lahore Press Club on 9th December 2016 under the auspices of Centre for Human Rights Education- Pakistan, with the support of the Members of Rwadari Tehreek and other civil society groups and organizations.

Continue reading

March From Pakistan to Al-Bakistan

jamaat women

Benazir Bhutto, former Prime Minister, once said, “Extremism can flourish only in an environment where basic governmental social responsibility for the welfare of the people is neglected. Political dictatorship and social hopelessness create the desperation that fuels religious extremism.”

Mohtarma, being a part of that environment, was well aware of it, where religious extremism was feeding under the shadows of Zia’s dregs. Radicalization is the main factor of extremism and extremism leads to terrorism, which according to statistics has caused 130,000 fatalities worldwide, between 2006 and 2013.

In Pakistan, around 60,779 people have lost their lives between 2003 and 2016 due to terrorism, and Pakistan stands at 4th out of 124 countries in a Terrorism Index, according to 2015 reports. Poverty and low standard of living are the main reasons for extremism. The majority of Pakistanis have middle class and lower middle class living standards, which has caused hopelessness and desperation. The quality-of-life index clearly shows the position of Pakistan; it stands at 93 out of 111 countries.

Continue reading

ماروی سرمد:کلوزنگ جہاد فیکٹریز

Al-Badar Mujahideen funeral

پچھلا جمعہ مالا کنڈ کا پچھلے کئی مہینوں کا خونی ترین دن ثابت ہوا .میڈیا رپورٹس کے مطابق اس دن دیر نے اکیس تابوت اٹھائے .
لوئر اور اپر دیر میں یہ تابوت افغانستان کے صوبے خوست سے آئے .جہاں پر امریکی ڈرون حملے کے نتیجے میں ،ایک دہشتگردوں کے ٹریننگ کیمپ میں خود کش بمباری کی ٹریننگ حاصل کرتے ہوے یہ پاکستانی ہلاک ہوئے .خوست کے گورنر کے مطابق ہلاک شدہ پاکستانیوں کی تعداد پچاس سے زیادہ ہے .
مقامی افراد کے مطابق یہ تابوت ،البدر تنظیم کے پرچم میں لپٹے ہوئے تھے .کچھ لاشیں تو صرف جسم کے چند حصوں پر مشتمل تھیں .اس خبر کے بعد یہ نیوز مکمل اندھیرے میں چلی گئی .پرنٹ میڈیا پر بھی صرف انگلش اخبارات میں اس کی خبر چھپی .ہمارے الیکٹرانک میڈیا نے “سیلف سنسر شپ ” کا مظاہرہ کرتے ہوئے اس پر کوئی خبر نہیں دی ،سیلف سنسر شپ اس لئے کہ کسی ریاستی ادارے نے سنسر شپ کے احکامات جاری نہیں کئے ہوئے ہیں . عام طور پر چیختے چنگھاڑتے اینکرز نے اس موضوع پر اپنے لب سی لئے .

اگر آپ البدر کی تاریخ پڑھیں تو اس خاموشی کی وجہ سمجھ میں آتی ہے .اس نام کا گروپ انیس سو اکہتر میں پاکستان کی اسٹیبلشمنٹ کی “پرا کسی” کے طور پر بنگالیوں کی “مکتی باہنی” جو کہ انڈیا کی پراکسی تھی کے خلاف استمعال ہوا تھا .مشرقی پاکستان اس وقت ان ڈان تنظیموں کی لڑائی کا اکھاڑا بن گیا جب بنگالی عوام کے پاکستان سے لاتعلقی کے جذبات نے اسکو فروغ دیا .مکتی باہنی اور البدر بمع اسکی ذیلی تنظیم الشمس نے اس دور میں سنگین جنگی جرائم کا ارتکاب کیا .
حمود الرحمان کمیشن رپورٹ کے چیپٹر نمبر دو کے نکتہ نمبر میں اٹھائیس میں لکھا ہے کہ
“ہمیں پاکستان آرمی کی جانب سے بنگالی دانشوروں اور پروفیشنلز کے قتل عام کا کوئی ثبوت نہیں ملا .اگر بنگلہ دیش حکومت کے پاس اسکا کوئی ثبوت ہے تو مہیا کرے “مگر اسی صفحے کے آخر میں اس بھوت کا ذکر ہے جس نے بنگلادیشی دانشوروں اور پروفیشنلز کا قتل کیا جس کا الزام پاکستان آرمی پر لگایا جاتا رہا جو اس وقت کے مشرقی پاکستان میں تعنیات تھی .کچھ یوں لکھا تھا کہ
” اب یہ بات معلوم ہو چکی ہے کہ اتوار بارہ دسمبر انیس سو اکہتر کو انڈین آرمی ڈھاکہ کے قریب پہنچ چکی تھی ،اس وقت پاکستان کے آرمی افسران اور انکے حامی سولین حمایتیوں کی صدارتی آفس میں ملاقات ہوتی ہے .یہ دونوں مل کر دو سو پچاس ایسے دانشوروں اور پروفیشنلز کے ناموں کی لسٹ بناتے ہیں جو کہ ڈھاکہ کی “کریم” ہے اور انہیں گرفتار یا ہلاک کرنے کا منصوبہ بناتے ہیں .یہ گرفتاریاں پیر اور منگل کو سرکاری سر پرستی میں چلنے والی البدر تنظیم کے زیر عمل ہو جاتی ہیں .سرکاری ہتھیار ڈالنے کے اعلان سے صرف ایک دن قبل ،البدر ان لوگوں کو گروپس میں تقسیم کر کے انکا قتل عام کر دیتی ہے “
گو کہ ان اکیس لاشوں کی خبر تو ہمارے میڈیا کی سکرینوں پر نہ چمک سکی .مگر جماعت اسلامی کے دو رہنماؤں کی ہلاکت کی خبر ،اس پر گرما گرم مباحثہ اور ان لیڈرز کے حق میں بیانات ،اور ہیڈلاینز خوب زور شور سے جگمگاتی رہی کیونکہ میڈیا میں اینکرز کی اکثریت پرو جماعت اسلامی ہے یا اکثر محب وطن بنانے کے شوق میں یہ سب کر رہے تھے . دلیل یہ تھی یہ لیڈرز جو پھانسی چڑھے پرو پاکستانی تھے .یہ بات تو ماننی چاہئے کہ ہر انسان کو “فیئر ٹرائل ” کا حق ملنا چاہئے ،چاہے اسکا تعلق بنگلہ دیش سے ہو ،بلوچستان سے ،سعودی عرب سے ہو یا ایران سے ہو .
البدر کی جانب واپس چلتے ہیں .1971 کے جنگی جرائم کے الزامات کے بعد یہ گروپ منظر نامے سے غائب ہو جاتا ہے .لیکن اچانک 1985 میں ایک بار پھر جماعت اسلامی کے بینر تلے افغان جہاد میں یہ تنظیم ایکٹو ہو جاتی ہے .افغان جہاد کے ہی دنوں میں البدر گلبدین حکمت یار کی حزب اسلامی میں ضم ہو جاتی ہے .بعد میں مقبوضہ کشمیر میں جہاد کے دوران یہ حزب المجاہدین کے نام سے کام کرتی ہے .اس وقت البدر کے ممبران “مجاہدین” اور اب “دہشتگردوں ” کے نام سے سے پکارے جاتے ہیں .انیس سو نواسی میں امریکا اس گروپ کو دہشت گرد تنظیم قرار دیتا ہے .
لیکن ٹریننگ کیمپس طالبان کے دور میں افغان زمین پر جاری رہتے ہیں .اس دوران پاکستان میں صوبہ سرحد اور اب پختون خوا میں بھی ٹریننگ کیمپس مانسہرہ کے علاقوں میں قائم رہتے ہیں .انیس سو اٹھانوے میں جا کر کہیں بخت زمین اس تنظیم کو دوبارہ مقبوضہ کشمیر کی آزادی کا نعرہ لگا کر کھڑا کر دیتے ہیں .عجیب بات یہ ہے کہ البدر کے اکثر کارکن خود کشمیری نہیں تھے اور نہ ہی بخت زمین کشمیری تھے ہاں اسکے بانی لیڈران میں سے شمار کئے جانے والے عارفین جو جانثار اور لقمان کے نام سے بھی جانے جاتے ہیں وہ نسلا کشمیری تھے .انکا تعلق آزاد جموں کشمیر سے تھا .
2002 میں یہ گروپ اب امریکن اور نیٹو افواج کے خلاف افغانستان کو آزاد کرانے کا مشن پر جت جاتا ہے .اسکے ساتھ ساتھ یہ اسرائیل اور تمام اتحادی ممالک کے خلاف بھی جہاد کا اعلان کر دیتا ہے .یہ بات بھی یاد رہے کہ افغان طالبان کی طرح البدر نے کبھی پاکستان آرمی کے خلاف کسی لڑائی میں حصہ نہیں لیا .بلکہ البدر کے حلقے تو کارگل کی جنگ میں پاکستان آرمی کے ساتھ لڑنے اور انڈین آرمی کو نقصان پہنچانے کے دعوے کرتے رہے .
ایک بات یا لنک جو اس سارے عرصے میں یکساں رہا ہے وہ جماعت اسلامی اور جماعت الدعوہ ہے .بلکہ کئی بار تو البدر تنظیم ، القاعدہ ،تحریک طالبان پاکستان ،اور لشکر طیبہ کے پاکستان میں “تسلیم شدہ” سیاسی اور سوشل گروپس جماعت اسلامی ،اور جماعت الدعوہ میں رابطے کا واسطہ رہے .تحریک طالبان کا چیف ملا فضل الله جماعت اسلامی کا رکن رہا تھا .بعد میں اس نے اپنی تنظیم تحریک نفاذ شہریت شریعت محمدی بنا لی تھی .
القاعدہ کے کئی سرگرم رکن جماعت اسلامی کے لیڈران کے گھروں سے برآمد ہوئے .2004 میں القاعدہ کا نمبر تھری خالد شیخ محمد جماعت اسلامی کی ایک خاتون ونگ لیڈر کے روالپنڈی کے ایک گھر سے گرفتار ہوا .اسی طرح ابو زبیدہ بھی بھی اسی سال پکڑا گیا جیسا لشکر طیبہ اور جماعت الدعوہ نے پناہ مہیا کر رکھی تھی .
ابھی حال ہی میں ستمبر 2013 میں القاعدہ کا ایک رکن جو فدائین کی ٹریننگ کے بعد لاہور آیا تھا ،پنجاب یونیورسٹی کے ہوسٹل نمبر ایک کے کمرہ نمبر 237 سے اسلامی جمعیت طلبہ کے اس وقت کے ناظم لاہور ،احمد سجاد کے نام سے الاٹ تھا ، جو کہ جماعت اسلامی کی طلبہ تنظیم ہے ،اس سے پکڑا گیا .
جماعت اسلامی کے سابق امیر اکثر پاک فوج کے خلاف اور تحریک طالبان کے حق میں بیانات دیتے رہے .بلکہ انہوں نے تو خود کش حملوں کے خلاف بیان دینے سے بھی انکار کر دیا تھا .
طویل کہانی کو مختصر کریں تو جماعت اسلامی کے لیڈرز جن کے گھروں سے پاکستانی عوام اور فوجیوں کو قتل کرنے والے دہشت گرد پکڑے گئے ،جماعت الدعوہ اور لشکر طیبہ جن کے القاعدہ اور تحریک طالبان سے تعلقات ہیں ،انکے سپورٹر جیسے ملا عبدلعزیز وغیرہ یہ سب کھلے عام دند ناتے پھر رہے ہیں .یہ کبھی ملک کے خلاف بیانات دیتے ہیں تو کبھی رٹ توڑتے ہیں مگر انکے خلاف کوئی کاروائی کی آواز بھی بلند نہیں کر سکتا .
لوئر اور اپر دیر میں اکیس نوجوانوں کے قاتل یہ جبری تنظیمیں ہمارے نوجوانوں کو جہاد کے نام پر مروا رہی ہیں .انکے خلاف کسی قسم کی کاروائی فی الوقت ایک دیوانے کا خواب ہے

Originally published by The Nation on 24 November 2015

The sweet sound of a glorious oil-drenched slap

The following piece was originally published by Express Tribune on 12th April 2015 but was removed from their website reportedly on the orders of a government official. We are re-posting the piece here for informational purposes only.

Chaudhry Nisar response to Anwar Mohammed Gargash

So finally the mouse has roared.

Parliament “desires that Pakistan should maintain neutrality in the Yemen conflict so as to be able to play a proactive role to end the crises,” declares the resolution passed by the joint session of parliament. Whoa!

And then comes the naked, blatant, shameless threat from the rich Arab sheikhs. Speaking to Khaleej Times, UAE Minister of State for Foreign Affairs Dr Anwar Mohammad Gargash warned Pakistan of having to pay a “heavy price” for taking on what he called an “ambiguous stand”. He said Pakistan should take a clear position “in favour of its strategic relations with the six-nation Arab Gulf Cooperation Council”

Then this Arab sheikh vomited a gem: “The vague and contradictory stands of Pakistan and Turkey are an absolute proof that Arab security — from Libya to Yemen — is the responsibility of none but Arab countries.” Really?

Continue reading